141

برطانیہ میں یہودیوں اور اسرائیل کے خلاف نفرت میں ریکارڈ اضافہ

برطانیہ میں ہونے والے ایک سروے کے ذریعے معلوم ہوا ہے کہ گزشتہ سال 2016 برطانوی شہریوں میں اسرائیل اور یہودیوں کے خلاف نفرت میں اضافہ ہوا ہے۔

برطانیہ کے چیتھم ہاؤس نامی ادارے کی جانب سے واشنگٹن پوسٹ کو دیے گئے ایک رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ برطانیہ کے 23 فیصد افراد اسرائیل سے نفرت کرتے ہیں اور 2012 میں یہ تعداد 17 فیصد تھی۔
یہ تعداد اس سال 2017 میں اور بڑھ گئی ہے اور ہر طرف یہودیوں پر ان کے اسکولوں اور مذہبی مقامات پر حملے شروع ہوچکے ہیں۔ ان کے قبرستانوں میں قبروں پر لوگ سواستیکا کا نشان لگا رہے ہیں ان حرکات سے معلوم ہو رہا ہے برطانیہ تیزی سے یہودی مخالف ملک بننے جارہا ہے جوکہ ان کی جمہوری اقدار کے سرار خلاف ہے۔

یہودیوں کے خلاف یورپی نفرت نئی نہیں ہے بلکہ کئی عشروں سے اس نفرت میں دن بدن اضافہ ہورہا ہے اور جب سے اسرائیل ملک کا وجود ہوا ہے ، دنیا یہودیوں کے لیے تنگ کردی گئی ہے اور اگر اسی طرح یہ سلسلہ جاری رہا تو ایک دن پورے یورپ سے ایک اور نقل مکانی ہوگی اور وہ یہودیوں کی اسرائیل کی طرف آخرسیاسی اور مذہبی نقل مکانی ہوگی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں