282

بچوں کا ختنہ اور یورپ میں مسلم، یہودی اتحاد

چند سال پہلے جرمنی میں ایک عدلت نے حکم دیا تھا کہ مذہب کی بنیاد پر کسی بھی بچے کا ختنہ کرنا سنگین انسانی نقصان ہے لہذا یہ جائز نہیں ہے اور اس حکم کی بنیاد پر جرمنی کی میڈیکل ایسوسی ایشن نے تمام ڈاکٹروں کو حکم جاری کیا تھا کہ کوئی ڈاکٹر کسی بھی بچے کا ختنہ نہ کرے۔
اس عدالتی و ایسوسی ایشن کے حکم کی وجہ سے جرمنی کی مسلمان اور یہودی کمیونٹی پریشانی کی شکار ہوگئی تھی۔ اس وقت دنیا کے یہ دونوں کی مذاہب ہیں جس میں بچوں کی پیدائش کے بعد ان کا ختنہ کروایا جاتا ہے اور یہ ان کا مذہبی فریضہ ہے۔
جرمنی کی مسلمان اور یہودی کمیونٹی نے اس غیر مذہبی حکم نامے کے خلاف آپس میں اتحاد کرلیا ہے اور اس حکم کو مل کر چیلیج کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔
یہودی اور مسلمانوں کے اس اتحاد نے حکومت اور پارلیمنٹ سے استدعا کی ہے کہ اس حکم نامے کے خلاف قانون سازی کی جائے۔

جرمنی میں ہر سال ہزاروں مسلمان اور یہودی بچوں کا ختنہ کروایا جاتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں